Tuesday, October 1, 2013

اب کے تجدیدِ وفا کا نہیں امکاں جاناں By Ahmed Faraz

 




اب کے تجدیدِ وفا کا نہیں امکاں جاناں 
یاد کیا تجھ کو دلائیں تیرا پیماں جاناں 



یوں ہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے 
کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں 

زندگی تیری عطا تھی سو تیرے نام کی ہے 
ہم نے جیسے بھی بسر کی تیرا احساں جاناں 
دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہو فُسردہ تو بھی 
دل کی کیا بات کریں دل تو ہے ناداں جاناں 

اول اول کی محبت کے نشے یاد تو کر 
بے پیئے بھی تیرا چہرہ تھا گلستاں جاناں 

آخر آخر تو یہ عالم ہے کہ اب ہوش نہیں 
رگِ مینا سلگ اٹھی کہ رگِ جاں جاناں 

مدتوں سے یہی عالم نہ توقع نہ امید 
دل پکارے ہی چلا جاتا ہے جانا! جاناں ! 

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یاراں جانا 
سر بہ زانوں ہے کوئی سر بہ گریباں جاناں 

ہر کوئی اپنی ہی آواز سے کانپ اٹھتا ہے 
ہر کوئی اپنے ہی سایے سے ہراساں جاناں 

جس کو دیکھو وہ ہی زنجیز بپا لگتا ہے 
شہر کا شہر ہوا داخل ہوا زِنداں جاناں 

ہم بھی کیا سادہ تھےہم نےبھی سمجھ رکھاتھا 
غمِ دوراں سے جدا ہے غمِ جاناں جاناں 

ہم، کہ روٹھی ہوی رُت کو بھی منالیتےتھے 
ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسم ہجراں جاناں 

ہوش آیا تو سب ہی خاک تھے ریزہ ریزہ 
جیسے اُڑتے ہوئے اُوراقِ پریشاں جاناں


 Ahmed Faraz





Enhanced by Zemanta
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...