Header Ads

Breaking News
recent

ٹرمپ کے دور میں امریکا معاشی طور پر دیوالیہ ہوسکتا ہے

اگرچہ دنیا کا سپر پاور سمجھا جانے والا امریکا اندرونی اور بیرونی قرضوں کے
بھاری بوجھ تلے کراہ رہا ہے۔ امریکا کے قرض کے اعدادو شمار خوفناک حدود کو چھو رہے ہیں مگر نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے عہد میں امریکا قرضوں کے نئے اور بھاری بوجھ تلے پستا دکھائی دے رہا ہے۔ ماہرین کا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے چار سالہ دور اقتدار میں امریکا کے قرضے میزائل کی رفتار سے اوپر کی طرف جائیں گے اور دنیا کی معاشی سپریم پاور معاشی طور پر دیوالیہ بھی ہوسکتی ہے۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ نے ڈونلڈ ٹرمپ کے دور میں امریکی معیشت پر پڑنے والے ممکنہ اثرات پر ایک تجزیاتی رپورٹ میں روشنی ڈالی ہے۔ اس رپورٹ میں امریکی محکمہ خزانہ کے بیانات کو بہ طور حوالہ پیش کیا گیا ہے۔ امریکی وزارت خزانہ کی طرف سے جاری کردہ بیانات میں بتایا گیا ہے کہ گذشتہ اکتوبر کے آغاز سے اب تک امریکی قرضوں مٰں 294 ارب ڈالر سے 19 کھرب 867 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔

’کارلائل‘ گروپ کے شریک بانی ڈیویڈ روبنچائن کا کہنا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی صدارتی انتخابات میں کامیابی امریکی معیشت کی تباہی کا اشارہ ہے۔ ان کے عہد حکومت میں امریکا مزید کئی کھرب ڈالر کا مقروض ہوسکتا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ بنیادی ڈھانچے کے لیے رقوم کی فراہمی ،قومی شرح ترقی اور روزگار کے نئے مواقع فراہم کرنے کے لیے بھی بھاری رقوم صرف کرنا ہوں گی۔ امریکی ارب پتی روبنچائن سابق امریکی صدر جمی کارٹر کی انتظامیہ میں بھی شامل رہے چکے ہیں کا کہنا ہے کہ ممکن ہے ڈونلڈ ٹرمپ اپنے دور میں ٹیکسوں میں کمی کریں۔ مگر ماضی میں دوسرے صدور بھی ٹیکسوں میں کمی، اخراجات میں اضافہ کرتے رہے ہیں جس کے نتیجے میں بھاری قرض لینا پڑتا رہا ہے۔
اخبار ’وال اسٹریٹ جرنل‘ سے بات بات کرتے ہوئے روبنچائن کا کہنا تھا کہ امریکا کا اس وقت کل قرضہ 20 کھرب ڈالر سے زیادہ ہے۔ لوگ کہیں گے کہ اچھا اگر قرضہ 20 سے بڑھ کر 22، یا 23 کھرب ڈالر یا مزید چند کھرب ڈالر بڑھ جائے تو اس سے کیا فرق پڑ جائے گا۔ امریکی ماہر اقتصادیات کا کہنا ہے کہ لگتا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے دور میں افراط زر میں غیرمعمولی اضافہ ہوگا۔ بے روزگاری بڑھےگی اور اوسط آمد کی شرح میں تشویشناک حد تک کمی آئے گی۔ امریکی میڈیا کی رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ گذشتہ بارہ مہینوں کے دوران امریکی قرضوں میں 1.4 کھرب ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔ چند ماہ یا ہفتوں کے دوران امریکی قرضوں کی مقدار 20 کھرب ڈالر سے تجاوز کرجائے گی۔ قرضوں میں ہوش ربا اضافہ ایک ایسے وقت میں ہو گا جب لوگوں میں بے روزگاری کے بڑھنے اور افراط زر میں اضافے کا بھی خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔

بنیادی ڈھانچے کی بہتری کے لیے بجٹ کی فراہمی پر ری پبلیکن اور ڈیموکریٹس دونوں خوش ہوتے ہیں اور وہ اس بجٹ کو اقتصادی اور سماجی مسائل کے حل کا ذریعہ سمجھتے ہیں۔ بنیادی ڈھانچے پر زیادہ سے زیادہ سرمایہ کاری دونوں فریقوں کے لیے مفید ہے۔ اس سے ایک تو روزگار کے مواقع پیدا ہوتے ہیں دوسرا معاشرے میں عمومی صلاحیتوں میں اضافہ ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر کمیونیکیشن کے میدان میں سرمایہ کاری یا موبائل فون اور اس طرح کے شعبوں میں اضافی سرمایہ کاری سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔ روبنچائن کا کہنا ہے کہ لگتا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ اقتصادی پالیسی میں سنہ 1981ء میں منتخب ہونے والے صدر رونلڈ ریگن کی پالیسی پرعمل کریں گے۔ رونلڈ ریگن نے بھی قومی پیداوار کی شرح بڑھانے کے لیے ٹیکس کم کردیے تھے۔

 علاء المنشاوی

No comments:

Powered by Blogger.