Header Ads

Breaking News
recent

شامی مہاجروں کے ازدحام میں

طاقتور امریکی خیراتی ادارے باراک حسین اوباما کی حکومت پر زور دے رہے ہیں کہ امریکہ مٰں آباد کئے جانے والے شامی پناہ گزینوں کی تعداد دوگنی کر دی جائے۔ امریکی قانون کی رو سے پناہ گزین   اور تارکین وطن   میں فرق ہے۔
مجبوری کے تحت ترک وطن کرنے والا پناہ گزین یا ریفیوجی ہے اور اقوام متحدہ کے رکن تمام ملک اسے ریفیوجی سٹیٹس دیتے ہیں جبکہ اختیاری ترک وطن کرنے والا امیگرنٹ ہے اور متعلقہ ملک یا اسکا کوئی شہری اس کا کفیل یا سپانسر ۔

 وزیر خارجہ جان کیری نے وعدہ کیا ہے کہ یکم اکتوبر کو شروع ہونے والے مالی سال کے دوران امریکہ مزید دس ہزار افراد کو پناہ دے گا جس میں اکثریت شامی ہوگی۔ اقوام متحدہ کے ایک معاہدے کی رو سے امریکہ ہر سال تقریبا ستر ہزار افراد کو جو ساری دنیا سے جنگ، مفلسی ، سیاسی اختلاف اور مذہبی تشدد کی بنا پر ترک وطن کرتے ہیں، ریفیوجی سٹیٹس دیتا ہے اور اب رفاہی ادارے جن میں بیشتر کرسچن ہیں،صدر کے نام اس تعداد کو دس ہزار سے زیادہ کرنے کا کھلا خط لکھ رہے ہیں، اس بات کا لحاظ کئے غیر کہ ان میں اکثریت کا وجود مذہبی ہے اور اندر آنے والے کئی لوگ پناہ گزینوں کے بھیس میں اسلامی اساس پرست بھی ہو سکتے ہیں۔ امریکہ اخبارات کی رپورٹوں کے مطابق پاکستان، ہندوستان، افغانستان، مصر، تونس ، اریٹیریا، البانیہ ، کوسوا اور دوسرے ملکوں کے کچھ لوگ مغربی یورپ میں آباد ہونے کی امید میں شامل پناہ گزینوں کی بھیڑ میں شامل ہو گئے ہیں۔

 شام میں جہاں سہ طرفہ جنگ جاری ہے، پندرہ لاکھ سے زیادہ لوگ بے گھر ہوئے ہیں۔ بشار الاسد کی آمریت کے خلاف جو اپویشن پیدا ہوئی امریکہ نے اسکی حمایت کی اور دونوں گروہوں میں جو خانہ جنگی جاری تھی اس پر داعش نے شب خون مارا۔ اب سعودی عرب کے مفتی اعظم شیخ عبدالعزیز حج پر داعش کو لتاڑ کر چوتھا فریق بن گئے ہیں۔

شام کی صورت حال سے اندازہ ہوا کہ سرد جنگ ابھی جاری ہے۔ مغرب کی قیادت بدستور امریکہ کر رہا ہے اور مشرق کی رہنمائی سوویت یونین کے سقوط کے بعد روس نے لے رکھی ہے۔ بڈھ بیڑ پر حالیہ افغان حملے سے جس میں 29 افراد شہید ہوئے ، اس جنگ کی خاصی نشان دہی ہوئی ہے۔ یہ ہوئی اڈہ امریکہ نے تعمیر کیا تھا اور یہاں سے اڑ کر گیری پاورز ، سوویت علاقے میں داخل ہوا تھا جسے خروشچیف کی فوجوں نے مار گرایا اور کچھ عرصے کے بعد یہ ہوئی مستقر بھی پاک فضائیہ کے حوالے کر دیا گیا جو اسے رہائش گاہ کے طور پر استعمال کر رہی تھی۔ روس اور ایران، شام کی حمایت کر رہے ہیں اور روسیوں نے مبینہ طور پر وہاں فوج اور جنگی سازوسامان بھی اتار دیا ہے جس پر امریکہ نوحہ کناں ہے۔
امریکی مسلمانوں کی دو سب سے بڑی تنظیمیں، اثنا اور اکنا جو بڑی حد تک مہاجروں کی جماعتیں ہیں، اسلامی دنیا کے اس المیے پر خاموش ہیں مگر ریفیوجی کونسل یو ایس اے جو امریکی چرچوں کی تنظٰم ہے، شامی پناہ گزینوں کے پہلے ریلے کا انتظار کر رہی ہے۔ اسکا کہنا ہے کہ چرچ کے لوگ ، رضاکارانہ طور پر نوواردوں کو سوشل سکیورٹی نمبر حاصل کرنے، انہیں روزگار کی درخواستیں دینے اور انکے لئے انگریزی زبان کی کلاسوں کا انتظام کرنے میں مدد دیں گے۔ بیشتر پناہ گزین ، ڈیٹرائٹ مشی گن، سین ڈیاگو کیلیفورنیا اور ایسی دوسری ریاستوں کا جہاں پہلے سے شام سے آنے والے بڑی تعداد میں آباد ہیں رخ کریں گے۔ باقی ممکن ہے قومی دارالحکومت اور ملحقہ میری لینڈ اور ورجینیا میں بیٹھ جائیں۔

کچھ علاقوں میں مختلف وجوہ کی بنا پر نئے آبادکاروں کی مزاحمت کے آثار ہیں۔ سرکاری حکام اور خیراتی اداروں کے عہدیدار کہہ رہے ہیں کہ مسیحی اقدار کو اجاگر کر کے وہ اس کا توڑ کریں گے۔ حسن اتفاق سے پوپ فرانسس ان دنوں امریکہ کے دورے پر ہیں اور وہ مائیگریشن کے زبردست حامی سمجھے جاتے ہیں۔ اس ملک کی تقریبا آدھی آبادی رومن کیتھولک ہے وہ قدرتی طور پر پوپ کو اپنا روحانی باپ مانتی ہیں اور باقی افراد بھی انکا احترام کرتے ہیں۔ ایک چرچ لیڈر نے کہا، ہمارے اسقف اعظم مشترکہ انسانیت پر اصرار کرتے ہیں اور انکا فرمانا ہمارے سر آنکھوں پر ہے۔ کچھ مہاجر مذہب تبدیل کر لیں گے اور متعلقہ چرچ جانا شروع کر دیں گے۔ فائدہ بالآخر مسیحت کا ہوگا۔ نام نہاد اسلامی خلافت کو یہ احساس ہونا چاہیے۔

اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں سے متعلق ادارے   نے اٹھارہ سو لوگوں کو امریکہ میں آبادکاری کے اہل قرار دیا تھا۔اوباما حکومت نے ان میں سے سولہ سو کا انتخاب کی اہے۔ بیشتر پناہ گیر ہوائی جہازوں میں بھر کر امریکہ لائے جائیں گے۔ اس وقت وہ اردن، لبنان اور ترکی میں پڑے ہیں۔ نو بڑی تنظیموں نے وائٹ ہاؤس کے نام اپنے کھلے خط میں مطالبہ کیا ہے کہ امریکہ ، موجودہ مالی سال کے دوران دو لاکھ پناہ گزین قبول کرے جن میں ایک لاکھ شامی ہوں۔ امریکہ شروع ہی سے مذہبی اور اقتصادی تارکین وطن کی سرزمین ہے۔ محکمہ خارجہ کے ایک ترجمان کہتے ہیں کہ آبادکاری کی مد میں موجودہ مالی سال کے لئے ایک اعشاریہ ایک بلین ڈالر رکھے گئے ہیں جو ستر ہزار لوگوں کی جروریات کے لئے کافی ہوں گے۔ ایک اندازے کے مطابق ایک لاکھ پینتالیس ہزار شامی پہلے سے امریکہ میں آباد ہیں۔
 
ابتدائی برسوں میں کرسچن شامی امریکہ میں وارد ہوئے تھے مگر اب زیادہ تر مسلم مہاجر خانہ جنگی سے بھاگ رہے ہیں۔ جو ادارے تازہ وارددوں کی میزبانی کریں گے ان مٰن واشنگٹن ڈی سی، شمالی ورجینیا اور بالٹی مور کی کیتھولک تنظیمیں شامل ہیں۔ امریکی اخبارات کی اطلاعات کے مطابق جرمنی جو شروع میں پناہ گزین قبول کرنے میں سب سے آگے تھا، شامیوں میں عراقیوں ، افغانیوں اور پاکستانیوں کو شامل ہوتے ہوئے دیکھ کر کانوں کو ہاتھ لگا رہا ہے۔

مہاجروں اور پناہ کے متلاشیوں کے ایک بحربے کراں کا سامنا کرتے اب وہ یہ کہہ رہا ہے کہ آسٹریا کے ساتھ اپنے بارڈر کی پابندیاں سخت کر دے گا، عارضی طور پر سرحد تک ریلوے سروس معطل کرے گا اور ان سڑکوں کی دیکھ بھال تیز تر کر دے گا جن پر پیدل سفر کرتے ہوئے ہزاروں پناہ گیر برلن کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ یہ سب مہاجر دنیائے اسلام سے آئے ہیں اور مغربی یورپ میں پناہ ڈھونڈ رہے ہیں۔

خودکشی اور ترک وطن کے درمیان کوئی ایسا مرحلہ ہونا چاہئے جہاں انسان اپنی جان اور عزت بچا سکے۔ چند سال پہلے مجھے گوئٹے مالہ سے ایک خط ملا جس سے پتا چلا کہ پاکستانی، جنوبی امریکہ کے اس غریب ملک میں بھی پہنچے ہوئے ہیں۔ گزشتہ سال آذربائیجان میں بہت سے پاکستانیوں کی موجودگی کا علم ہوا جو میڈیکل کی تعلیم کے لئے اس ملک مٰن داخل ہوئے تھے۔ جب مانگ بڑھے گی تو رسد میں بھی اضافہ ہوگا۔ سنتے ہیں کہ اسلام آباد ، لاہور اور کراچی جیسے شہروں میں اعلیٰ تعلیم کیلئے امریکہ آںے والوں کا تانتا بندھا ہوا ہے جو انسانی سمگلروں کے ہاتھوں لٹ رہے ہیں۔ 

مبینہ طور پر ایک سمگلر نے ایک امیدوار سے پچپن ہزار ڈالر وصول کئے اور ویزا ملنے پر مزید چار ہزار ڈالر کی وصولی کی امید ظاہر کی ہے۔ اگر یہ صحیح ہے تو اس سمگلر اور اس گنجے چالیس سالہ شخص میں کوئی فرق نہیں جس نے شام سے ترکی میں گھس کر ایک فرسودہ سے ہوٹل مین دکان کھولی ہے اور شامی مہاجروں سے فی کس تیرہ سو ڈالر لیتا ہے ماسوا اس کے کہ وہ سستا ہے۔ ربر کی ایک ڈسپوزیبل کشتی میں ازمیر کے ساحل سے یونان تک سفر کراتا ہے اور اس کے ناپائیدار کشتی بعض اوقات منزل مقصود پر پہنچنے سے پہلے مسافروں سمیت ڈوب جاتی ہے۔

کوئی فرد آسانی سے اپنا وطن ہیں چھوڑتا۔ مہاجر بڈاپسٹ اور مشرقی یورپ کے دوسرے شہروں میں مارے مارے پھر رہے ہیں۔ ان کا بس چلے تو وہ ترکی میں نہیں رکیں گے کیونکہ کسی زمانے میں وہ یورپ کا مرد بیمار کہلاتا رہا ہے ۔ وہ ازمیر سے پینتالیس منٹ دور یونان میں بھی نہیں ٹھہریں گے کیونکہ وہ یورپی ملک ہونے کے باوجود بدترین مالی بحران کا شکار ہے۔ انکی پہلی ترجیح شمالی امریکہ اور مغربی یورپ ہو گی جہاں چلنے پھرنے اور ووٹ دینے کی آزادی ہے، جہاں سرحدیں معدوم یا برائے نام ہیں اور جہاں ایک دوسرے ملک منتقل ہونے کیلئے ویزے کی درخواست نہیں دینی پڑتی۔

 پاکستان سے اعلی تعلیم کیلئے امریکہ آںے کے خواہش مند نوجوانوں کو مشورہ یہ ہے کہ اگر وپ واقعہ تعلیم کی غرض سے امریکہ کا ارادہ رکھتے ہیں تو پچپن ہزار ڈالر سمگلر کو مت دیں۔ قریبی امریکن سنٹر یا قونصل خانے جائیں، ان کے فارم بھریں ،تعلیمی ویزا لیں، امریکی درسگاہیں کاروباری بنیادوں پر کام کرتی ہیں۔ وہ چشم براہ ہیں۔ ہوائی جہاز کا ٹکٹ خرید کر امریکہ آئیں۔ آپ پڑھ لکھ کر یہاں ملازمت بھی حاصل کر سکتے ہیں۔ صدر اوباما غیر ملکی ذہنوں کو امریکہ میں رکھنے کے حامی ہیں۔
 
اکمل علیمی
بہ شکریہ روزنامہ  دنیا 

No comments:

Powered by Blogger.