Header Ads

Breaking News
recent

ڈوبتے ہوئے تارکینِ وطن کو بھی نہ بچائیں

انڈونیشیا میں آچے صوبے کے ماہی گیروں کے مطابق حکام نے انھیں کہا ہے کہ وہ ساحل کے قریب کشتیوں میں بیٹھے تارکینِ وطن کی مدد نہ کریں، چاہے وہ ڈوب بھی رہے ہوں۔

گذشتہ ہفتے مقامی لوگوں نے میانمار سے بھاگ کر آنے والے کم از کم 700 بنگلہ دیشی اور روہنجیا مسلمانوں کو آچے کے ساحل کے قریب سے بچایا تھا۔ اس طرح اب آچے کے کیمپوں میں کم از کم 1,500 پناہ گزین رہ رہے ہیں۔
آرمی کے ایک اہلکار نے کہا ہے کہ ساحل پر کسی اور تارکینِ وطن کو لانا غیر قانونی ہو گا۔

علاقے میں سب ممالک نے تارکینِ وطن پر اپنی سرحدیں بند کر دی ہیں۔
ہزاروں افراد جن میں زیادہ تعداد روہنجیا مسلمانوں کی ہے سمندر میں بے یارو مددگار پڑے ہیں۔ یہ لوگ میانمار سے غربت اور تشدد سے تنگ آ کر بھاگ کر آئے تھے۔ اس کے علاوہ کشتیوں پر کام کی تلاش میں آنے والے بنگلہ دیشی بھی موجود ہیں۔

امدادی ایجنسیوں کا کہنا ہے کہ کشتیوں پر لوگ ناکافی خوراک کی وجہ سے نڈھال ہیں اور انھیں فوری مدد کی ضرورت ہے۔ وہ لوگ جو بچ کر کسی طرح ساحل پر پہنچ گئے کہتے ہیں کہ کشتیوں پر خوراک کے لیے جان لیوا لڑائیاں ہوتی ہیں۔
جنوبی تھائی لینڈ میں بی بی سی کے نمائندے جوناتھن ہیڈ کہتے ہیں کہ یہ بات سوچنا ہی بہت مشکل ہے کسی حکومت نے کبھی اتنا سخت موقف اختیار کیا ہو جتنا جنوب مشرقی ایشیا کی حکومتیں اپنی ساحلوں پر تارکینِ وطن کے خلاف اختیار کر رہی ہیں۔

ملیشیا نے اپنی شمال مغربی سمندری سرحد داخلے کے لیے بند کر دی ہے۔ تھائی لینڈ نے جلدی جلدی اپنی کشتیوں کے انجن ٹھیک کر کے اپنی سمندری سرحدوں پر کھڑا کر دیا ہے۔ اب انڈونیشیا میں ماہی گیر کہہ رہے ہیں کہ انھیں حکم ملا ہے کہ وہ کسی کی بھی مدد نہ کریں، اگرچہ وہ ڈوب بھی رہے ہوں۔
وہ میانمار کو اس بحران کا ذمہ دار ٹھہراتے ہیں لیکن میانمار ذمہ داری قبول کرنے سے انکار کرتا ہے۔

لیکن مسئلہ یہ نہیں کہ کون اس کا ذمہ دار ہے، اب اصل مسئلہ یہ ہے کہ جانوں کو کس طرح بچایا جائے۔

ایک ماہی گیر نے بی بی سی کو بتایا کہ فوجی اہلکاروں کی وارننگ کے باوجود اگر ان کو کوئی ڈوبتا ہوا نظر آیا تو وہ اس کی مدد کریں گے۔
وہ انسان ہیں، ہمیں ان کی مدد کرنا چاہیے۔
فوجی ترجمان فواد بسیا نے کہا کہ ماہی گیر خوراک، ایندھن اور پانی کشتیوں تک پہنچا سکتے ہیں یا انھیں ٹھیک کرنے میں مدد دے سکتے ہیں لیکن ان کو ساحل پر لانا، انھیں انڈونیشیا میں غیر قانونی طور پر لانے کے مترادف ہو گا۔

No comments:

Powered by Blogger.