Header Ads

Breaking News
recent

پاکستانی پاسپورٹ دنیا کا دوسرا کمزور ترین پاسپورٹ قرار دے دیا گیا

اگر تو آپ کے پاس پاکستانی پاسپورٹ ہے تو بری خبر یہ ہے کہ اسے دنیا کا
دوسرا کمزور ترین پاسپورٹ قرار دیا گیا ہے۔ یہ بات ہیلنے اینڈ پارٹنرز کی 2016 کی نئی فہرست میں سامنے آئی ہے جس میں پاسپورٹس کی طاقت کا معیار بغیر ویزہ ممالک میں اجازت کو قرار دیا گیا ہے۔ فہرست کے مطابق جرمن پاسپورٹ اس وقت دنیا میں سب سے طاقتور ہیں جن کو رکھنے والے 218 میں سے 177 ممالک میں بغیر ویزہ کے جاسکتے ہیں جس کے بعد سوئیڈن کا نمبر ہے جس کے شہریوں کو 176 ممالک میں ویزے کی ضرورت نہیں۔

فن لینڈ، فرانس، اٹلی، اسپین اور برطانیہ کے پاسپورٹس رکھنے والے 175 ممالک میں بغیر ویزہ کے جاسکتے ہیں جبکہ بیلجیئم، ڈنمارک، نیدرلینڈز اور امریکی شہریوں کو یہ چھوٹ 174 ممالک میں ملتی ہے۔ پانچویں پر 173 ممالک کے ساتھ آسٹریا، جاپان اور سنگاپور ہیں، جبکہ 172 ممالک کے ساتھ کینیڈا، آئرلینڈ، جنوبی کوریا، لگسمبرگ، ناروے، پرتگال اور سوئٹزرلینڈ چھٹے نمبر پر ہیں۔ یونان اور نیوزی لینڈ کے شہری 171 ممالک میں اس سہولت سے مستفید ہوسکتے ہیں، جس کے بعد آسٹریلیا ، مالٹا اور ہنگری، چیک ریپبلک اور آئس لینڈ بالترتیب آٹھویں، نویں اور دسویں نمبر پر ہیں۔ 

دوسری جانب دنیا کے کمزور ترین پاسپورٹس کی بات کی جائے تو افغانستان سرفہرست ہے جس کے پاسپورٹ ہولڈر 25 ممالک میں ویزہ فری انٹری کے حقدار ہیں۔ پاکستانی پاسپورٹ پر یہ سہولت صرف 29 ممالک کے لیے ہے اور اس طرح وہ دوسرا کمزور ترین پاسپورٹ قرار پایا۔ عراق 30 ممالک کے ساتھ تیسرے، صومالیہ 31 ممالک کے ساتھ چوتھے، شام 32 ممالک کے ساتھ پانچویں، لیبیا 36 ممالک کے ساتھ چھٹے، اریٹیریا، ایتھوپیا، ایران، نیپال، فلسطین اور سوڈان 37 ممالک کے ساتھ ساتویں، کوسوو، جنوبی سوڈان اور یمن 38 ممالک کے ساتھ 8 ویں، بنگلہ دیش، کانگو، لبنان، سری لنکا 39 ممالک کے ساتھ 9 ویں جبکہ برونڈی، شمالی کوریا اور میانمار 42 ممالک کے ساتھ 10 ویں نمبر پر ہیں۔

No comments:

Powered by Blogger.